پہلا صفحہ | کتاب خانہ | مقالے | نقد شبہات | سوال و جواب | نظريات | علماء | ھدايت يافتہ | مناظرات | گیلری |

|

جب خدا نے حکومت آئمہ اطہار علیھم السلام کے سپرد کی ہے تو پھر امام رضا (ع) نے مامون کی دی ہوئی سلطنت کو کیوں ٹھکرا دیا براۓ کرم اس کا جواب بھیجۓ ؟


اس سوال کے جواب کے لۓ ایک مستقل کتاب لکھنے کی ضرورت ہے اگر آپ اس دور کے سیاسی، سماجی حالات کوغور سے پڑھے ہوتے تو ہرگز ایسا بے تکا سوال نہیں کرتے ۔ لہذا سب سے پہلے ان عوامل کو آپ کے سامنے پیش کرتا ہوں جس کی بناء پر امام رضاعلیہ السلام نے مامون کی ولیعہدی کو ٹھکرا دیا تھا ۔
جب آپ تاریخ اسلام کا غور سے مطالعہ کریں گے تو خود ہی سمجھ جائینگے کہ کسی امام کو حکومت تشکیل دینے کا موقع فراہم نہیں ہوا تھا، ورنہ یہ لوگ سچے اور وفادار ساتھیوں کی تمنا کیوں کرتے 1
دوسرے یہ کہ حکومت و خلافت اماموں کا حق ہے ورنہ حضرت علی علیہ السلام خطبہ (شقشقیہ) میں اس کا گلہ نہ کرتے اگر اس کی تفصیل دیکھنا ہے تو استاد مطہری کی کتاب (سیری در نھج البلاغہ) ملاحظہ فرمائیے 2
ولیعہدی امام رضا علیہ السلام
امام علیہ السلام نے مامون رشید کی ولیعہدی کو قبول کیوں نہیں فرمایا اس کی حقیقت خود تاریخ نے بیان کیا ہے ۔کیا وہ صحیح معنوں میں جانشین بنا رہا تھا ؟یا اس کے پیچھے سیاسی اغراض و مقاصد پنہاں تھے ؟
مامون اس کے ذریعہ ایرانیوں کو رام کرنا چاہ رہا تھا ؟یا اس کے پس منظر میں علویوں کے قیام کو سرکوب کرنا منظور تھا ؟یا پھر اپنی حکومت پر امامت کی مہر تصدیق ثبت کرانا چاہتا تھا ؟ان سب عوامل پر غور و خوض کر نے کی ضرورت ہے ۔ جب یہ آپ اچھی طرح تاریخوں سے سمجھ لینگے توخود بخود ولیعہدی کے ٹھکرانے کا فلسفہ سمجھ جائینگے ۔
امام علیہ السلام نے مشروعیت کو مد نظر رکھتے ہوۓ حکومت کو نہیں ٹھکرایا تھا بلکہ سیاست کو دیکھ کر مامون کی مکارانہ چال کو سر کوب کیا تھا ۔
اس کی توضیح شہید مطہری نے اچھی دی ہے ۔
جب مامون نے دوسری مرتبہ امام علیہ السلام کو خوب ڈرایا دھمکایا تو آپ نے جواب دیا کہ تم اتنا اصرار کیوں کررہے ہو ؟
امام کا یہ جملہ دل کی گہرائی سے نکلا تھا اور جب بات زیادہ بڑھ گئ تو آپ نے مامون سے کہا کہ ۔
تم کون ہوتے ہو حکومت کو دینے والے ؟
اس جملے سے امام علیہ السلام باور کرارہے تھے کہ یہ میرا حق ہے ورنہ ایسا جملہ مامون سے کیوں کہتے ۔
اگر خلیفہ کا انتخاب عوام پر ہے تو اس اعتبار سے بھی تم مجھے ولیعہدبنانے کا حق نہیں رکھتے ہو ۔ 3
امام علیہ السلام نے جب بحالت مجبوری ولیعہدی کو قبول فرمایا یا اس وقت بھی مامون کی خلافت کو غاصب ثابت کیا اس کو بھی استاد مطہری نے نقل فرمایا ہے کہ۔
"لنا علیکم حق برسول اللہ و لکم علینا بہ حق فاذا اریتم الینا ذالک و جب علینا الحق لکم" 4
خلافت ہم اہلبیت(ع) کا حق ہے اور مامون ہماری ہی چیز کو ہمیں لوٹارہا ہے 5
جب آپ نے ان مذکورہ روایتوں کو ملاحظہ فرمالیا تو اب مجھے امید ہے کہ آپ اچھی طرح مطمئن ہوگۓ ہونگے ۔اگر اس کے بعد بھی کچھ شبہ ہو تو آپ تاریخ و سیرت کو اچھی طرح پڑھیں ۔ 6



1. اصول کافی ج2،ص242۔
2. سیری در نہج البلاغہ پانچویں فصل ۔
3. سیری در سیرت آئمہ اطہار (ع) ص213۔
4. بحار الانوار ج49،ص49۔
5. سیری در سیرت آئمہ اطہار (ع) ص222۔221۔
6. حکومت دینی از منظر شہید مطہری ۔محمد حسن قدر دان قراملکی سے لیا ہے ۔





تنقيد

نام :
ايميل :
مقابل کي دو گنتي کو خط ميں جوڑ کر لکھيں
6+10 =